1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. آپس میں قطع رحمی نہ کرو، یقینا" اللہ تمہارا نگہبان ہے۔یتیموں کا مال لوٹاؤ، اُن کے اچھے مال کو بُرے مال سے تبدیل نہ کرو ۔( القرآن)

  3. شرک کے بعد سب سے بڑا جرم والدین سے سرکشی ہے۔( رسول اللہ ﷺ)

  4. اگر تم نے ہر حال میں خوش رہنے کا فن سیکھ لیا ہے تو یقین کرو کہ تم نے زندگی کا سب سے بڑا فن سیکھ لیا ہے۔(خلیل جبران)

کہیں ہمالہ سے غم کا چشمہ ابل رہا ہے

'میری شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از سیدعلی رضوی, ‏جولائی 19, 2019۔

  1. سیدعلی رضوی

    سیدعلی رضوی یونہی ہمسفر

    کہیں ہمالہ سے غم کا چشمہ ابل رہا ہے
    ہماری آنکھوں میں خواب تیرا جو جل رہا ہے

    یہ گیلی آنکھیں ہماری آہوں کا راستہ ہیں
    ہماری آنکھوں سے سرد لاوا نکل رہا ہیں

    کسی دریچے پہ پھول پھولوں کا منتظر ہے
    رسد طلب کا پراناجھگڑا بھی چل رہا ہے

    ہے انتظاری اداسیوں سے بھرا وہ چہرہ
    جو لب چباتا ہے اپنے ہاتھوں کو مل رہا ہے

    جمود ایسا کہ کوئی تصویر لگ رہا ہوں
    گمان تشنہ صفا سے مروہ ٹہل رہا ہے

    کسی کے ڈوبے سے دل کا دریا بہت ہی خوش ہے
    ہیں مست موجیں کہ سارا دریا اچھل رہا ہے

    عجیب حالت ہے اضطرابی بتا رہی ہے
    ستارہ آنکھوں میں سچا موتی مچل رہا ہے
    ----------------------------
    ابو لویزا علی
     

اس صفحے کو مشتہر کریں