1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. آپس میں قطع رحمی نہ کرو، یقینا" اللہ تمہارا نگہبان ہے۔یتیموں کا مال لوٹاؤ، اُن کے اچھے مال کو بُرے مال سے تبدیل نہ کرو ۔( القرآن)

  3. شرک کے بعد سب سے بڑا جرم والدین سے سرکشی ہے۔( رسول اللہ ﷺ)

  4. اگر تم نے ہر حال میں خوش رہنے کا فن سیکھ لیا ہے تو یقین کرو کہ تم نے زندگی کا سب سے بڑا فن سیکھ لیا ہے۔(خلیل جبران)

ایذا دہی کی کیسی یہ رسمیں نکال دیں

'میری شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از سیدعلی رضوی, ‏اپریل 11, 2019۔

  1. سیدعلی رضوی

    سیدعلی رضوی یونہی ہمسفر

    ایذا دہی کی کیسی یہ رسمیں نکال دیں
    کھالیں ہی کھینچ لیں کبھی جانیں نکال دیں

    انسانیت کے دوست نے مثلے بنا دیے
    ہم نے بہشت کو نئی راہیں نکال دیں

    کیا کچھ کیاہے سب نے ڈرانے کے واسطے
    آنکھیں نکال لیں کبھی آنکھیں نکال دیں

    لیکن سبھی کُروب میں اک کرب ِکرب ہجر
    جس نے سبھی درود کی آہیں نکال دیں

    دردِ فراق دیکھیۓ اس تیغ باز نے
    ساکت پہاڑیوں کی بھی چیخیں نکال دیں

    کچھ تو وفا کی راہ میں جانیں لٹا گۓ
    کچھ بہہ گۓ تھےکچھ نے تو نہریں نکال دیں

    یعنی ہمارے ضبط کا سامان تھا یہی
    اشکوں پہ بند باندھ لیں آہیں نکال دی
     

اس صفحے کو مشتہر کریں